Thursday, December 19, 2013



Circle Bakote

A land of peaceful people
Searched and written by
MOHAMMED OBAIDULLAH ALVI
(Journalist, Historian, Blogger and Anthropologist)
**************************************************************************
For photos, credit goes to senior journalist 
Naveed Akram Abbasi
of Bakote (Cell No 03335417660)
**************************************************************************
Thinkers are simultaneously agreed on a point of Criminology Science that crime takes birth when social injustice is dancing in our peaceful society. It has been confirmed that feudalism existed in Circle Bakote since millenniums, started prehistory periods to end of 1952 in Jalal Baba provincial government in NWFP (now KPK). Agriculture based civilization evolutionarized in this area among valuable virtues from birth time to entry in to final house after death but basic nature of crime in this are have only one point of production, is value and composition of land possession individually or as a tribe. 
Nature of Disputes
There is a vast agriculture land in Circle Bakote in many tribes possession.  We can be analyzed only one example in UC Birote that many sub tribes of Dhund Abbasi are master of land there as Khanals in Termuthean, Kaho East and West, Nikodrals in Kahoo  East and Birote Khurd, Bankals, Faqirals, Murtals, Mirals, Mehrals, Chingsals, Nawaesals and Kamlals have a vast land in Central Birote, Hitrerhi, Hotrol and Sangrerhi in Birote Khurd. Qutbals and Mojwals are solo master of both Nakers in Birote Khurd but Mojwals are a powerful stack holders in gravitational centre of Circle Bakote, I means Union Council Bakote. The possessed this area from Kethwal and Kerhal tribes in 14th century and continued cultural evolution with previous Kethwali Indo Persian civilization. The size of land minimized as time by time and generation after generation, a since of loss continuously aroused among land owners, some accepted the reality of evolutionary steps in inheritance but a few believed in power usage and aggression. The boundary of KPK and Punjab from west bank of River Jhelum to Jhari Kas on Rawalpindi Abbottabad Highway came in to being when Heje Khan, Hamu Khan, Humaira Khan and Pilu Khan had not acknowledged their step brother Lahr Khan. This injustification produced an anarchy among Rattan Khan family and Lahr Khan approached to Civil Court in Pherwala, Kahuta, the capital of Ghakherh Kingdom of Potohar and Kohsar. Jusrat Khan was feudal Lord of area and he summoned both parties and his court establish in Dewal. He settled this issue after hearing their point of view and decided a draw of boundary line between Heje Khan, his brother and Lahr Khan property as sub feudal lords. This boundary line had gained a permanent status in Mughal Kingdom, Sikh regime of Lahore, British Government and Pakistan now.
Other side of dispute
People of Circle Bakote were offensive in far past as they attacked on Karhals in Bakote but when they occupied the area they became defensive. Bakote vacated area repopulated by Mojwal in a accidental assurances as a woman of Birotians were killed by them in Basian and they vacated Basian as a killing penalty. They migrated Bakote in second half of 16th century. They felt insult and continued assault over Basian time by toime.  Birotians fuaduals coloniezed Rakheyal (guards) families at Domale Basian and elert in defensive position. Birotians also occupied inside Bakote territory on Knair Pull and started silicone trade as a new source of income. They legalized this accopation in first Bandobast (Permanent Sattelment) of 1861, as a result three hundred yard of land in upside north of Knair Pull from River Jhelum to Rekhadi is now property of Union Council Birote inside Union Council Bakote.The Bazar of Knair Pul is also belonged to Birotians or people of Basian. All voices regarding dearness in this place of interests and natural beauty for tourists should be analyzed in this contest by Bakotians journalists. Same dispute is also at Malkote Bridge and Koza Gali boundaries with Union Council Birote. Union Council Brote claimed that Moshpuri is a part of Birote but Koza Gali and Nathea Gali Authorities, especially Galyat Development Authority (GDA) translated this highest peak as part of Natheya Gali.

کیا آج کے پاکستانی عدالتی نظام کی موجودگی میں

 جرگہ سسٹم ضروری ہے ۔۔۔۔؟ 

 ***********************
تحریر
محمد عبیداللہ علوی
 ***********************
 جس دیس کی کورٹ کچہری میں ...۔۔۔ انصاف ٹکوں پہ بکتا ہو
جس دیس کا منشی، قاضی بھی مجرم سے پوچھ کے لکھتا ہو.
جس دیس میں غربت مائؤں سے ........ بچے نیلام کراتی ہو.
جس دیس میں دولت شرفاء سے ......... ناجائز کام کراتی ہو.
اس دیس میں رہنے والوں پر .......... ہتھیار اٹھانا واجب ہے.
اس دیس کے سربراہوں کو ........ سولی پہ چڑھانا واجب ہے
*********************** 

بیروٹ سے رکن ضلع کونسل جناب خالد عباسی صاحب نے ۔۔۔۔ میری جرات رندانہ ۔۔۔۔ پر سخت الفاظ میں اظہار خیال کرتے ہوئے فرمایا ہے کہ ۔۔۔۔۔۔ اس کے علاوہ آپ نے ہمارے جرگہ سسٹم کی جو توہین کی ہے اس پر مجھے سخت اعتراض ہے، بزرگوں کو عزت دینی چاہیئے وہ پڑھے لکھے ہوں یا ان پڑھ ۔۔۔۔۔ ان کے تجربہ سے فائدہ اٹھانا چاہیے اور جرگہ جس وقت کوئی فیصلہ کرتا ہے تو وہ خدا کے سامنے جوابدہ ہوتا ہے۔
اس بارے میں ۔۔۔۔ میں نے ابھی اظہار خیال بھی نہیں کیا تھا کہ ان کی رائے سے اختلاف کرتے ہوئے دو اورآرا Opinions بھی آ گئی ہیں ۔۔۔۔ پہلی میں آصف علی شاداب نگر اپنے جواب میں خالد صاحب سے کہتے ہیں کہ ۔۔۔۔
ایسے بزرگوں کو گولی مار دینی چائیے جو انہوں نے فیصلے کئے ہیں ۔
دوسری رائے میں ۔۔۔۔ فیصل چوہدری کہتے ہیں کہ ۔۔۔۔
علوی صاحب ایسا ایک واقعہ گائوں علی آباد میں جون 2016میں پیش آیا تھا، دلدار حسین مقتول کا نام تھا جس کو بہت بے دردی سے قتل کیا تھا کسی نے اورایک سال گزر چکا اُس کے قاتل ابھی تک بکوٹ پولیس گرفتار نہیں کر سکی۔ ۔۔۔مقتول کے چھوٹے چھوٹے بچے تھے اُن کی تو دُنیا ہی اُجاڑ دی گئی ،پی کے 45 کے سب گائوں میں ایسےہی جرگہ سسٹم ہیں جو کہ خدمت خلق اور اللہ کو حاضر و ناظر سمجھ کر فیصلہ نہیں کرتے بلکہ ۔۔۔۔۔ غریب کا اُلٹا مذاق اُڑایا جاتا ہے ۔۔۔۔۔ بکوٹ پولیس سیاسی مداخلت میں ہے وہ کسی بھی ایسے واقعہ پر بر وقت نہیں پہنچتی اور نہ ایکشن لیا جاتا ہے۔۔ خیبر پختونخواہ پولیس میں تبدیلی ضرور آئی مگر بکوٹ پولیس میں ابھی تک تبدیلی دیکھنے میں نظر نہیں آتی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟
میرا خیال ہے کہ ۔۔۔۔۔۔ خالد صاحب ۔۔۔۔۔۔ آپ کو ان پڑھ، جاہل، مصلحت پسند، ظالم کا ساتھ دینے، مظلوم کی دنیا اندھیر کرنے والے اور قانون سے بے بہرہ ان نام نہاد جرگوئیوں کے بارے میں مندرجہ بالا دو جوابوں کے بعد میرے کچھ کہنے کی ضرورت باقی نہیں رہی ۔۔۔۔۔ خالد صاحب ۔۔۔۔۔۔ جرگہ کا مطلب اور مقصد مظلوم کی گردن پر پائوں رکھ کر ظالم کے حق میں فیصلہ کرنا نہیں ہوتا ۔۔۔۔ علاقائی روایات، مقامی پنچائتی غیر تحریر شدہ قوانین اور سماج کے طے کردہ اصولوں اور ظالم کو سزا دینے کی عدالت کا نام جرگہ ہے ۔۔۔ ہمارے ہاں ہماری ثقافت اور تاریخ اور ڈکشنری میں ایک لفظ ۔۔۔۔۔ اوڑہ ۔۔۔۔۔ ہے، آپ جانتے ہیں ۔۔۔۔ اوڑہ ۔۔۔۔ کس قانون کو کہتے ہیں ۔۔۔۔؟ یہ تعزیرات پاکستان میں بھی درج نہیں بلکہ ہمارے سماج کا ایک ایسا قانون تھا جو بھلا دیا گیا ہے اور اسے جرگہ اپنی قوت سے لوگوں کی طرف سے دئیے گئے منڈیٹ کے ساتھ نافذ کیا کرتا تھا ۔۔۔۔۔۔ ؟
اگردیہہ یا علاقہ میں کوئی شخص کسی کو عمداً یا سہواً قتل کر دیتا تو وہ فرار نہیں ہوسکتا تھا، اسے جرگہ کی عدالت ۔۔۔۔۔ دیوان ۔۔۔۔۔۔ میں بھینس اور گائے کو باندھنے والی مورکھ یا گلانوی سے باندھ کر بطور ملزم پیش کیا جاتا تھا ۔۔۔۔۔ خالد صاحب، یو سی بیروٹ میں ایک دیوان نامی مقام آپ کے گھر کے پاس بھی ہے اور ایک باسیاں میں بھی ۔۔۔۔ یہ ہمارے قدیم نظام انصاف کے سماجی اقدار کے تحفظ کے وہ معتبر اور قابل تقلید ادارے تھے جہاں ملزم کو اپنے دفاع کا پورا حق دیا جاتا تھا، ان دیوانوں کے ججز میرے اور آپ کے بزرگ ہی ہوتے تھے ۔۔۔۔۔ جو کسی لا کالج کے تعلیم یافتہ نہیں نہ ہی کسی لا چیمبر کے ہی ممبر ہوتے تھے بلکہ اپنے تجربے، ادراک اور وجدان کی بدولت معاملہ کی تہہ تک پہنچتے ۔۔۔۔۔ اور مقدمات فیصل کیا کرتے تھے۔
چلو جی کسی وجہ سے قتل ہو ہی گیا ۔۔۔۔ پولیس کی قطعاً کوئی ضرورت نہیں تھی، یہی بزرگ پہلے قاتل کے خاندان کو مقتول کے کفن دفن اور اس کے پسماندگان کی کفالت کا حکم دیتے تھے ۔۔۔۔ جب قل، جمعراتیں اور اس کے بعد چالیسواں ہو جاتا تھا تھا تو عدالت ۔۔۔۔ دیوان ۔۔۔۔ میں لگتی تھی، کیا مجال کہ ملزم کہیں مفرور ہو پاتا اور اگروہ ایسی جسارت کر بیٹھتا تو ۔۔۔۔ اس ۔۔۔۔ دیوان ۔۔۔ کا اعلان شدہ اوراٹل حکم تھا کہ ملزم جہاں اور جب ملے اسے قید زندگی سے آزاد کر دو ۔۔۔۔ اس کی املاک اور جائیداد مقتول خاندان کو منتقل کر دو ۔۔۔۔ اس کے گھر کی غیر شادی شدہ بالغ بیٹیاں اور بہنیں قبضہ میں لیکر مقتول کے خاندان میں بیاہ دو ۔۔۔۔ اتنی سخت تعزیرات کی موجودگی میں وہ کون سا نادان تھا جو فرار ہونے کی کوشش کرتا ۔۔۔۔؟ عافیت اسی میں تھی کہ وہ ۔۔۔۔ دیوان میں جرگہ کے سامنے پیش ہو کر وہ حالات و واقعات بیان کرے جن سے مجبور ہو کر اسے ایک انسان کی جان لینا پڑی ۔۔۔۔ وہ اپنے اہل خانہ کی موجودگی میں اپنی صفائی پیش کرتا اور پھر مقتول کے اہل خانہ اور دیگر لوگوں سے ۔۔۔۔ شاہدیاں (گواہی) لی جاتیں اور پھر یہ جرگہ اللہ اور اس کے رسول ﷺکے سامنے ہر فیصلے سے پہلے قرآن حکیم پر ہاتھ رکھ کر حلف اٹھاتا اور ان کا فیصلہ بھی بے مثال ہوتا ۔۔۔۔ پورا علاقہ ان کے غیرجانبدارانہ فیصلہ پر عش عش کر اٹھتا ۔۔۔۔ موجودہ بیروٹ اور دیول کے درمیان پنجاب ہزارہ بائونڈری، باسیاں سے بکوٹ کی طرف موجوال برادری کا انخلا، موہڑہ عیسوال سے متصل ۔۔۔۔ موضع اوڑا ۔۔۔۔ اور جماعت اسلامی بیروٹ کے سابق امیر مرحوم عبدالغفور عرف خوشی محمد کے بزرگوں کا کہو شرقی میں گھر بساوڑا ۔۔۔۔ اسی دور کے انصاف کی یادگاریں ہیں جو سینہ بسینہ روایات کی صورت اگلی نسل کو منتقل ہو رہی ہیں ۔۔۔۔۔
قتل کی صورت میں دیوان میں ملزم اگر مجرم ثابت ہو جاتا تو اس کے سامنے چار آپشن ہوتے تھے ۔۔۔۔
اول ۔۔۔۔ اسے مقتول پارٹی یا اہل دیہہ کے حوالے کر دیا جاوے خواہ وہ اسے اسی طرح موت کے گھاٹ اتاریں جیسے مقتول کو قتل کیا گیا تھا۔
دوئم ۔۔۔۔ اسے مقتول قبیلہ کی ۔۔۔۔ گلانوی (غلامی) ۔۔۔۔ میں دے دیا جاوے جو ان کا عمر بھر کیلئے ۔۔۔۔ پانڈی (غلام) ۔۔۔۔۔ کی صورت میں تا دم آخر ہر طرح کا وقت بے وقت کام کرنے کا پابند ہو، اس زمانے میں اراضی کے علاوہ دو طرح کی اور بھی شاملات ہوتی تھیں جن میں ایک سرکاری سنڈھا اور بیل اور دوسرا ۔۔۔ یہ پانڈی، ان کو اختیار تھا کہ جہاں سے چاہیں کھائیں، جہاں چاہیں قیام کریں مگر بوقت ضرورت ان کے پاس انکار کی کوئی گنجائش نہیں تھی ۔
سوئم ۔۔۔۔۔ یہ قاتل مقتول پارٹی کی مرضی سے اپنی قیمتی اراضی سے دیت ادا کرے ۔۔۔۔ اور
چہارم ۔۔۔۔۔ مقتول پارٹی اپنے کسی ایک یا ایک سے زیادہ مردوں کیلئے قاتل کے گھرانے سے ایک یا ایک سے زیادہ شادی کیلئے خواتین کا اپنی مرضی اور جرگہ کی ضمانت سے انتخاب کرے۔
میرے دوستو اور بھائیو ۔۔۔۔ کیا کوئی غیرتمند شخص ایسی شرائط قبول کر سکتا ہے ۔۔۔۔؟ مگر قتل کرنے والے کو انہی چار میں سے ذیلی تین شرائط پر زندگی کی بھیک ملا کرتی تھی ۔۔۔۔ تاریخ سرکل بکوٹ اس بات کی شاہد ہے کہ ۔۔۔۔ میرے اور آپ کے بزرگوں نے جرگوئی کی حیثیت سے صرف اللہ تبارک تعالیٰ اور اس کے رسولﷺ کی رضا کے حصول کیلئے وہ وہ فیصلے دئیے کہ آج کی دنیا بھی حیران ہے ۔۔۔۔ میرا بیروٹ کے ممبر ضلع کونسل جناب خالد عباسی صاحب سے ہی سوال ہے کہ ۔۔۔۔ آپ کے خاندان میں ہی پہلے واقعہ پر انصاف سے کام لیا جاتا تو ۔۔۔۔ یاسر عباسی کا خون ناحق کیوں بہتا ۔۔۔۔؟ حضرت علیؒ کا قول ہے کہ ۔۔۔۔ کفر سے تو کوئی حکومت چلائی جا سکتی ہے مگر ظلم سے ہر گز نہیں ۔
میں انگریزوں کے دور سے قبل کے کوہسار میں نظام انصاف کے بارے میں بھی چند باتیں اور کرنا چاہتا ہوں ۔۔۔۔ اس زمانے میں تعلیم اتنی عام نہیں تھی، صرف دیول میں ایک سرکاری مدرسہ تھا جس کا انتظام پیر صاحب دیول شریف کے بزرگوں کے ہاتھ میں تھا ۔۔۔۔ ہر پانڈ میں کچھ مذہبی پیشوا ہوتے تھے اور ان کے جان و مال اور عزت و آبرو کی ذمہ داری اس پانڈ کے فیوڈل لارڈ کے سپرد ہوتی تھی ۔۔۔۔ جو اس گراں Village کا ایک نہائت معزز شخص ہوتا تھا ۔۔۔۔ فیوڈل کلاس گراں کے پروفیشنلز اور لیڈنگ کلاسز کی کفالت، عزت و آبرو اور ان کی املاک کے تحفظ اور اقتصادی و سماجی ضروریات کی راخیال ہوتی تھی ۔۔۔۔ اس عہد کی ساری سیاست، فیوڈل ازم اور قیادت کا سارا دار و مدار زراعت پر تھا ۔۔۔ کھلین یا کھرین کی صورت میں سال میں دو بار پروفیشنلز کو اور عشر کی صورت میں لیڈنگ کلاس کی ادائیگی و اجرائی ہوتی تھی ۔۔۔۔ پروفیشنلز کو بھی ایک معاہدہ عمرانی Social contract کے تحت کہنا نہیں پڑتا تھا بلکہ ۔۔۔۔ پاپوش ساز اس گراں کے ہر خورد و کلاں کو سال میں ایک بار ترپڑوں کا ایک جوڑا ۔۔۔۔ بافندے سال میں ہر گھر کو دو پلے (بستر) اور گھر کے ہر فرد کو کپڑوں کا ایک جوڑا (پہرنی اور سُتھن)، زلف تراش ہر گھر کے ہر مرد کی ہر مہینے ایک حجامت اور شادی بیاہ میں ذیلی خدمات بتھ فیرہ تک، مستری حضرات نئے گھر کی تعمیر (پلنتھ بھرنے سے پہچھی تک) اور وفات کی صورت میں اجتماعی شہر خموشاں میں قوور اور خفن کی فراہمی، چندر کا انتظام اور غلے کی پسوائی وغیرہ بھی انہی خاندانوں کی ذمہ داری تھی ۔۔۔ مذہبی فرائض لیڈنگ کلاس کے سپرد ہوتے تھے، شادی بیاہ میں نکاح، مہر کا تعین، طلاق کے حرام و حلال کا فیصلہ، نوزائدہ بچے کے کان میں اذان و اقامت اور اچھے نام کا انتخاب اور ماتم داری میں نماز جنازہ کے بعد قبروں پر مسلسل چالیس روز تک ختم قرآن کا دور، ہر جمعرات پر دعا مغفرت کے علاوہ نماز پنجگانہ، نماز تراویح، رمضان میں سحر و افطار کی اذان کا اہتمام کے تجہیز و تکفین جیسے معاملات اور سال بھر متعلقہ خاندان کے بزرگوں کو تلاوت قرآن کا ریگولر ثواب پہنچانا جیسے امور طے شدہ ہوتے تھے ۔۔۔۔ اور جرائم کا نام و نشان تک نہیں تھا ۔۔۔۔ ایسا کیوں تھا اور آج کے ترقی یافتہ، تعلیم یافتہ اور روشن خیال دور کے کوہسار میں ایسا کیوں نہیں ہے ۔۔۔۔ اس کا جواب بھی میں جناب خالد عباسی صاحب کی صوابدید پر چھوڑتا ہوں ۔

Lawyers of UC Birote
  1. Abdul Qayoum Qureshi of Termuthean, ever first lawyer graduated in 1940. He was advocate in the Suprem Court of Pakistan, died in 1995.
  2. Mohammed Nawaz Abbasi advocate of Hotrol, Birote Khurd. He is Aducate of Sindh High Court  in Karachi since 1980.,
  3. Mohabbat Husain Awan of Central Birote. He is Corporate Lawyer in Karachi.
  4. Mohammed Arshad Abbasi of Naker Mowal, advocate in Lahore High Court, Rawalpindi Bench since 1975. He built his hous in front of Government Higher Secondary School Birote in 2009.
  5. Tahir Faraz Abbasi of Kahoo East, practicing in Session Court Abbottabad, He was Nazim of Union Council Birote in 2001-05
  6. Sajjad Abbasi of Basian, advocate in Session Court Abbottabad since 1982.
  7. Shuaib Abbasi of Basian, advocate in Session Court Murree. He appointed as ad hoc Session Judge in Sawat Also in 2002.
  8. Mrs Tayeba Abbasi, she is sister law of Shuaib Abbasi of Basian and practiced in District Rawalpindi Bar Association and contested as candidate DBA election 2014.
  9. Tayeba Abbasi
  10. Saeed Ahmed Abbasi and Sajid Quraish Abbasi are also advocate and practiced with Nawaz Abbasi Advocate in Karachi but they did not continue their career as lawyers. The are educationists and politicians of Circle Bakote.
  11. Tayeba Abbasi is first lady lawyer of Basian, UC Birote practicing in Session and High Court Rawalpindi. She is active trade unionist of the Rawalpindi Bar and won office of the Voice President. (To be continued)

Bakote Police important Tel Ph Nos.

POLICE STATION OFFICIAL NO: +92-0992-451361
----------------------
SHO Gulzar Khan:+92-0301-8125014
ASI Bakote Amjed Salar Khan:+92-0312-5877422
ASI Kohala Nazeer Abbasi:+92-0344-9438433
*********************
 Lawyers of Bakote
(To be continued)
 
 Bakote.......... 17th Oct, 2014

Ex SHO Bakote Jawaid Khan with journalists of Circle Bakote, Tariq Nawaz Abbasi (current Chairman), A Waheed Abbasi, Ishteaq Abbasi (current Presidant GCBUJ) and host Naweed Akram Abbasi
 Published in all newspapers of Abbottabad, Rawalpindi Islamabad and Peshawar
05th May, 2014

Bakote Police Station through ages
Sardar Lehna Sing  of Garhi Habibullah (1863-92)
first SHO of Circle Bakote
********************************
First in History Raja Mell of Malkot (before Islam) established his a small kingdom in Murree Hills, Galyat and Circle Bakote after destruction of Gandara Kingdom of Taxila by Huns. He constructed forts at strategical important places of region and he first time use Turkish word KOT for fort but it was a KOTLA (small fort) not KOT. Bakote was also a land of KOTLA and a contingent staff were appointed. during Raja Rasalo time. When Gakherh accopied this land they continue status co there till Hazara annexation with Punjab in Ranjeet Sing reign in 1818. They upgraded this KOTLA in to a Fort with heavy contingent of horse riders who speedily approached any place in any time. Same forts also constructed in Aarhi (Had on Murree Birote borderline) in Dewal, Dannah, Rajoya, and Khanpor. British Government renovated status of this FORT in Police Station, constructed new building and appointed new staff with guns, a small jail and a force of Numberdars as well as secret intelligence providers. The first ever SHO of British time was Sardar Lehna Sing  of Garhi Habibullah and last was Sardar Teja Sing, who went to Jamu under safeguard of Bakotians on 25th March, 1947.  Abdullah Khan of Hawailiyan was first Muslim SHO of Circle Bakote appointed on 27th Mach, 1947 and he continuesly working there till 1950, the longest period of any SHO in Circle Bakote. The first SHO belonged to Union Council Bakote is Basharat Abbasi who is employ Punjab Government Home Department and serving in Rawalpindi Revision since 30 years. (Source: FIR register no 02, (1946) 13, (!948) of Bakote Police Station. I studied these registers personally in 2009)

Newly constructed Bakote Police Station
People of Circle Bakote says that Justice by Bakote Police providing on this piece of paper
that have no value according to law.
Is this a humor with people or really Bakote Police have no printed stationary?

Crimes in 2015 in Circle Bakote
سرکل بکوٹ کے عوام کی سب سے زیادہ محبت اور خلوص پانے والا ایس ایچ او
سردار واجد رشید
اہلیان سرکل بکوٹ کا
 ایس ایچ اوسردار واجد حسین
سے محبت کا اظہار
اہلیان کہو شرقی کی
ایس ایچ اوسردار واجد رشید
 کے حق میں قرارداد مزمت
اہلیان سرکل بکوٹ کا
جمعرات 29جولائی 2016کو
سابق
ایس ایچ او بکوٹ سردار واجد حسین کے حق میں
 اہلیان  یو سی بیروٹ کا
 احتاجی مظاہرہ
بہت بے آبرو ہو کر ترے کوچے سے ہم نکلے
\   
 ایس ایچ او بکوٹ پرویز خان بگنوتر ٹرانسفر
 نئے ایس ایچ او نےچارج سنبھال لیا
  ایس ایچ او بکوٹ پرویز خان منشیات فروشوں کا سرپرست ثابت ہوا اور بگنوتر ٹرانسفر کر دیا گیا، ایبٹ آباد پولیس لائن کا ایس ایچ او بکوٹ میں تعینات، ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر شیر اکبر خان نے احکامات جاری کر دئے۔ پرویز خان کی طرف سے سرکل بکوٹ میں منشیات فروشوں کی سرپرستی کا الزام بھی ثابت، بیروٹ میں وی سی کے نو منتخب ناظم ندیم عباسی اور سابق ناضم آفاق عباسی نے منشیات فروش اور اس کے قبضہ سے ملنے والی اڑھائی کلو چرس پکڑ کر پرویز خان کے حوالے کی تھی ۔اس سے پہلے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 
بیروٹ: ویلیج کونسل کے نو منتخب ناظم ندیم عباسی اور سابق ناظم آفاق عباسی منشیات کا وزن کر رہے ہیں، ایس ایچ او بھی پاس کھڑے ہیں۔
 
02nd March, 2015
Daily Aaj Abbottabad
3rd March, 2015

Nature of Crimes in Circle Bakte
28th Jan, 2014
18th Jan, 2014
12th Jan, 2014
 Baber Abbasi......... The real character of Madarba Scandal
14th Jan, 2014

 THE UNBELIEVABLE CRIME OF THE YEAR 2013
The unbelievable crime in 2013 that first ever committed in Circle Bakote crime history 
(Special complements and credets for these photos to Naweed Akram abbasi, senior journalist of UC Bakote.